108

میوزک کے بغیر گانا گانا

سوال
مفتی صاحب ! کیا میوزک کے بغیر گانا گانا ٹھیک ہے؟
جواب
واضح رہے کہ ساز اور موسیقی کے آلات کے ساتھ گانا سننا حرام ہے۔ اسی طرح جو اشعار کفروشرک یا کسی گناہ کے تذکرے پر مشتمل ہوں، یا فحاشی اور نامحرم عورتوں کی عشق پر ابھارتے ہوں، ان کا گانا اور سننا بھی ( گو آلات کے بغیر ہو) حرام ہے، البتہ مباح اشعار اور ایسے اشعار جو حمدو نعت یا حکمت و دانائی کی باتوں پرمشتمل ہوں، ان کو ترنم کے ساتھ بغیر موسیقی کے پڑھنا اور سننا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

قال الله تعالي:
ﻭﻣﻦ اﻟﻨﺎﺱ ﻣﻦ ﻳﺸﺘﺮﻱ ﻟﻬﻮ اﻟﺤﺪﻳﺚ ﻟﻴﻀﻞ ﻋﻦ ﺳﺒﻴﻞ اﻟﻠﻪ ﺑﻐﻴﺮ ﻋﻠﻢ ﻭﻳﺘﺨﺬﻫﺎ ﻫﺰﻭا ﺃﻭﻟﺌﻚ ﻟﻬﻢ ﻋﺬاﺏ ﻣﻬﻴﻦ (سورة لقمان :6)

و في تفسير القرطبي :

ﺭﻭﻯ ﺳﻌﻴﺪ ﺑﻦ ﺟﺒﻴﺮ ﻋﻦ ﺃﺑﻲ اﻟﺼﻬﺒﺎء اﻟﺒﻜﺮﻱ ﻗﺎﻝ: ﺳﺌﻞ ﻋﺒﺪ اﻟﻠﻪ ﺑﻦ ﻣﺴﻌﻮﺩ ﻋﻦ ﻗﻮﻟﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ:” ﻭﻣﻦ اﻟﻨﺎﺱ ﻣﻦ ﻳﺸﺘﺮﻱ ﻟﻬﻮ اﻟﺤﺪﻳﺚ” ﻓﻘﺎﻝ: اﻟﻐﻨﺎء ﻭاﻟﻠﻪ اﻟﺬﻱ ﻻ ﺇﻟﻪ ﺇﻻ ﻫﻮ، ﻳﺮﺩﺩﻫﺎ ﺛﻼﺙ ﻣﺮاﺕ. ﻭﻋﻦ اﺑﻦ ﻋﻤﺮ ﺃﻧﻪ اﻟﻐﻨﺎء، ﻭﻛﺬﻟﻚ ﻗﺎﻝ ﻋﻜﺮﻣﺔ ﻭﻣﻴﻤﻮﻥ ﺑﻦ ﻣﻬﺮاﻥ ﻭﻣﻜﺤﻮﻝ. ﻭﺭﻭﻯ ﺷﻌﺒﺔ ﻭﺳﻔﻴﺎﻥ ﻋﻦ اﻟﺤﻜﻢ ﻭﺣﻤﺎﺩ ﻋﻦ ﺇﺑﺮاﻫﻴﻢ ﻗﺎﻝ ﻗﺎﻝ ﻋﺒﺪ اﻟﻠﻪ ﺑﻦ ﻣﺴﻌﻮﺩ: اﻟﻐﻨﺎء ﻳﻨﺒﺖ اﻟﻨﻔﺎﻕ ﻓﻲ اﻟﻘﻠﺐ، ﻭﻗﺎﻟﻪ ﻣﺠﺎﻫﺪ، ﻭﺯاﺩ: ﺇﻥ ﻟﻬﻮ اﻟﺤﺪﻳﺚ ﻓﻲ اﻵﻳﺔ اﻻﺳﺘﻤﺎﻉ ﺇﻟﻰ اﻟﻐﻨﺎء ﻭﺇﻟﻰ ﻣﺜﻠﻪ ﻣﻦ اﻟﺒﺎﻃﻞ. ﻭﻗﺎﻝ اﻟﺤﺴﻦ: ﻟﻬﻮ اﻟﺤﺪﻳﺚ اﻟﻤﻌﺎﺯﻑ ﻭاﻟﻐﻨﺎء. ﻭﻗﺎﻝ اﻟﻘﺎﺳﻢ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ: اﻟﻐﻨﺎء ﺑﺎﻃﻞ ﻭاﻟﺒﺎﻃﻞ ﻓﻲ اﻟﻨﺎﺭ. ﻭﻗﺎﻝ اﺑﻦ اﻟﻘﺎﺳﻢ ﺳﺄﻟﺖ ﻣﺎﻟﻜﺎ ﻋﻨﻪ ﻓﻘﺎﻝ: ﻗﺎﻝ اﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ:”ﻓﻤﺎﺫا ﺑﻌﺪ اﻟﺤﻖ ﺇﻻ اﻟﻀﻼﻝ.

ﻭﺭﻭﻯ اﻟﺘﺮﻣﺬﻱ ﻭﻏﻴﺮﻩ ﻣﻦ ﺣﺪﻳﺚ ﺃﻧﺲ ﻭﻏﻴﺮﻩ ﻋﻦ اﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﺃﻧﻪ ﻗﺎﻝ: (ﺻﻮﺗﺎﻥ ﻣﻠﻌﻮﻧﺎﻥ ﻓﺎﺟﺮاﻥ ﺃﻧﻬﻰ ﻋﻨﻬﻤﺎ: ﺻﻮﺕ ﻣﺰﻣﺎﺭ ﻭﺭﻧﺔ ﺷﻴﻄﺎﻥ ﻋﻨﺪ ﻧﻐﻤﺔ ﻭﻣﺮﺡ ﻭﺭﻧﺔ ﻋﻨﺪ ﻣﺼﻴﺒﺔ ﻟﻄﻢ ﺧﺪﻭﺩ ﻭﺷﻖ ﺟﻴﻮﺏ).

ﻭﺭﻭﻯ ﺟﻌﻔﺮ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﻋﻦ ﺃﺑﻴﻪ ﻋﻦ ﺟﺪﻩ ﻋﻦ ﻋﻠﻲ ﻋﻠﻴﻪ اﻟﺴﻼﻡ ﻗﺎﻝ ﻗﺎﻝ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ: (ﺑﻌﺜﺖ ﺑﻜﺴﺮ اﻟﻤﺰاﻣﻴﺮ) ﺧﺮﺟﻪ ﺃﺑﻮ ﻃﺎﻟﺐ اﻟﻐﻴﻼﻧﻲ. ﻭﺧﺮﺝ اﺑﻦ ﺑﺸﺮاﻥ ﻋﻦ ﻋﻜﺮﻣﺔ ﻋﻦ اﺑﻦ ﻋﺒﺎﺱ ﺃﻥ اﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻗﺎﻝ: (ﺑﻌﺜﺖ ﺑﻬﺪﻡ اﻟﻤﺰاﻣﻴﺮ ﻭاﻟﻄﺒﻞ).

(ج : 14، ص : 52، ط : دارالکتب المصریۃ)

کذا فی صحیح مسلم :

ﺣﺪﺛﻨﺎ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ اﻟﻤﺜﻨﻰ، ﻭﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺑﺸﺎﺭ، ﻗﺎﻻ: ﺣﺪﺛﻨﺎ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺟﻌﻔﺮ، ﺣﺪﺛﻨﺎ ﺷﻌﺒﺔ، ﻋﻦ ﻗﺘﺎﺩﺓ، ﻋﻦ ﻳﻮﻧﺲ ﺑﻦ ﺟﺒﻴﺮ، ﻋﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺳﻌﺪ، ﻋﻦ ﺳﻌﺪ، ﻋﻦ اﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻗﺎﻝ: «ﻷﻥ ﻳﻤﺘﻠ…….
فقط واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں