103

کیا زیرِ ناف بالوں کی صفائی غسلِ حیض سے پہلے کی جا سکتی ہے؟

سوال
زیر ناف بال غسل حیض سے پہلے کاٹنے کا حکم ہے یا بعد میں؟

جواب
حیض کی حالت میں عورت کے لیے زیر ناف بال و بغل کے بال کاٹنے کے سلسلے میں کوئی صریح جزئیہ نہیں مل سکا؛ البتہ فقہائے کرام نے جنابت کی حالت میں ناخن اور بال کاٹنے کو مکروہ لکھا ہے، اس سے معلوم ہوتا ہے کہ عورت کے لیے بھی حیض کی حالت میں ناخن کاٹنا اور زیر ناف، و بغل کے بال صاف کرنا مکروہ ہے۔ فتاوی ہندیہ میں ہے:

“حلق الشعر حالة الجنابة مکروه، وکذا قَصُّ الأظافیر”. (الفتاوی الهندیة: ٥/ ٤١٤)

لہذا صورتِ مسئولہ میں غسلِ حیض سے فراغت کے بعد غیر ضروری بالوں کی صفائی کرنا چاہیے۔ فقط واللہ اعلم

فتوی نمبر : 144004201181

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں