100

پریشان حال اسلام کی بیٹیوں کے نام

پریشان حال اسلام کی بیٹیوں کے نام

مقبل بن هادی الوادعيؒ فرماتے ہیں کہ:

کیا آپ جانتی ہیں؟؟!
حضرت عائشہؓ کی کوئی اولاد نہیں تھی اس کے باوجود بھی کتب السنة النبوية میں ایسا کوئی اثر نہیں ملتا کہ حضرت عائشہؓ نے کبھی رسول اکرم ﷺ سے یہ کہا ہو کہ آپ میرے لئے اولاد کی دعا کریں!!

کیا آپ جانتی ہیں؟؟!
نبی کریم ﷺ کی وفات کے وقت ام المؤمنین عائشہؓ کی عمر صرف اٹھارہ سال تھی، یعنی آپؓ نبی اکرمﷺ کے بعد 47 سال زندہ رہیں، رسول اکرمﷺ آپؓ سے بے انتہا، بے لوث محبت کرتے تھے، اور آپ انتہائی غیرت والی تھیں، ان سب کے باوجود آپؓ نے اپنی زندگی اسی رنج وغم میں یوں ہی نہیں گزاردی بلکہ خود کو علم وعبادت میں مشغول رکھا اور کبار صحابہ کرام کی معلمہ، مثقفہ اور مفتیہ بنی رہیں۔

زندگی کا انحصار صرف ان ہی چیزوں پر نہیں ہے؛
نہ اولاد پر
نہ شادی پر
نہ گھر پر
نہ مال پر
اور نہ ہی ان چیزوں سے زندگی رک سکتی ہے نہ ہی والدین کے گزر جانے سے. اور نہ ہی اولاد کے نہ ہونے سے زندگی رک سکتی ہے۔

الله جو کچھ واپس لیتا ہے اسکے بدلے اس سے بہتر چیزوں سے نوازتا ہے(نعم البدل عطاء کرتا ہے)۔
اور یہ دنیا مکمل طور کسی کو بھی نہیں ملتی ہے بلکہ یہ تو ایک آزمائش گاہ ہے۔

لہذا اپنے دلوں کو ایمان سے، الله کی رضا سے اور اسکے ساتھ حسنِ ظن سے معمور کریں، اور اپنے وقت کو طلبِ علم اور ان کاموں میں لگائیں جو آپکے لئے اور آپکے معاشرے کے لئے دنیوی اور اخروی اعتبار سے فائدہ مند ثابت ہوں۔

صبر کو اپنا توشہ اور قرآن کو اپنا ساتھی بنالیں۔۔۔ فرمان باری تعالیٰ ہے {مَا أَنْزَلْنَا عَلَيْكَ الْقُرْآنَ لِتَشْقَى} ہم نے قرآن کو آپکے لئے بطورِ تکلیف نہیں اتارا. [طه:2]

کسی بھی انسان کے لئے قطعاً یہ مناسب نہیں کہ وہ فارغ رہے،اسلئے کہ شیطان ایسے انسان پر برے خیالات کے ذریعے مسلط ہوتا ہے جو فارغ ہو۔ پس اسکے لئے ضروری ہے کہ وہ خود کو خیر کے کاموں میں مشغول رکھے تاکہ اس کا نفس اسے ضرر میں مبتلا نہ کرے۔

آخری بات
میں نیک وصالح عورت کو نصیحت ہے کہ وہ نیک وکار عورتوں کی صحبت اور مجالس کو لازم پکڑے کیونکہ اس سے ایمان میں، علم میں اور بصیرت میں اضافہ ہوتا ہے.۔

غارة الأشرطة :؃ 474

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
ترجمہ:
ام سلیم مفلحاتی
م٢٦/٩/٢٠٢٠
کیٹاگری میں : Islam

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں