101

عشاء کا وقت داخل ہونے سے پہلے اذان اور نماز ادا کرنا

سوال
پشاورمیں عشاء کاوقت اوقاتِ صلات کے نقشوں کے مطابق نوبج کر تیرہ منٹ ( 9:13 ) پرداخل ہوتاہے، لیکن اس کےباوجودبعض مساجد میں پونے نو (8:45 )بجے اذان ہوتی ہے اور نو (9:00 ) بجے جماعت ہوتی ہے، کیایہ اذان اور نمازہوجاتی ہے یااس کی قبل ازوقت ہونے کی وجہ سے اعادہ ضروری ہے ؟

جواب
اگر  واقعۃً معتمد نقشوں کے مطابق پشاور میں عشاء کا وقت نوبج کر تیرہ منٹ ( 9:13 ) پرداخل ہوتاہے، لیکن اس کےباوجودبعض مساجد میں پونے نو (8:45 )بجے اذان اور نو (9:00 ) بجے جماعت ہوتی ہے تو اذان اور نماز کا اعادہ ضروری ہے۔

الدر المختار (1 / 385):

” ( فيعاد أذان وقع ) بعضه ( قبله ) كالإقامة خلافاً للثاني في الفجر”.

الدر المختار (1 / 361):

“( و ) وقت ( العشاء والوتر منه إلى الصبح و )”. فقط واللہ اعلم

فتوی نمبر : 143909200389

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں